Latest Urdu news from Pakistan - Peshawar, Lahore, Islamabad

اسلام آباد میں دفعہ144 کیخلاف پی ٹی آئی کی درخواست قابل سماعت ہونے پر فیصلہ محفوظ

اسلام آباد(ویب ڈیسک) اسلام آباد ہائیکورٹ نے وفاقی دارالحکومت میں دفعہ 144 کے نفاذ کے خلاف پی ٹی آئی کی درخواست کے قابل سماعت ہونے پر فیصلہ محفوظ کرلیا۔
اسلام آباد ہائیکورٹ میں پی ٹی آئی، سینیٹر سیف اللہ نیازی اور اسد عمر کی درخواست پر سماعت ہوئی۔ جس میں عدالت نے زیر سماعت کیسز کے ساتھ درخواست کو منسلک کرنے کی ہدایت کی۔
اسد عمر نے عدالت میں بتایا کہ ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ نے 2 ماہ کے لیے دفعہ 144 کا نفاذ کیا۔ جو خلاف قانون ہے۔ اس پر عدالت نے استفسار کیا کہ آپ کس طرح متاثرہ ہیں؟۔ آپ کو کسی بات سے روکا گیا ہے؟۔ اس پر پی ٹی آئی کے وکیل بابر اعوان نے کہا کہ اس صورت میں ریلی نہیں نکالی جا سکتی۔
جسٹس اطہر من اللہ نے کہا کہ احتجاج یا ریلی نکالنے کا طریقہ ہے جس کے لیے اجازت لینی ہوتی ہے۔ دھرنا کیس کا ایک فیصلہ بھی موجود ہے، آپ نے وہ پڑھا ہے؟۔ اس جماعت کی دو صوبوں میں حکومت ہے۔ کیا ادھر کبھی دفعہ 144 نافذ نہیں کی گئی؟۔ لا اینڈ آرڈر کا معاملہ ایگزیکٹو نے دیکھنا ہے جس میں عدالت کبھی مداخلت نہیں کرے گی۔
وکیل نے کہا کہ یہ ایک سیاسی جماعت کی نہیں سابق ایم این اے کی درخواست ہے۔ اس پر جسٹس اطہر من اللہ نے ریمارکس دئیے کہ یہ سابق رکن اسمبلی کی درخواست نہیں۔ بلکہ پٹیشنر اب بھی ممبر قومی اسمبلی ہیں۔ جب تک استعفی منظور نہیں ہوتا تب تک وہ رکن اسمبلی ہیں۔
چیف جسٹس اسلام آباد ہائیکورٹ نے کہا کہ پنجاب اور کے پی میں اس جماعت کی حکومتیں ہیں۔ آپ پہلے ان صوبوں میں جا کر یہ قانون اسمبلی سے ختم کرائیں۔ صوبائی اسمبلیوں سے قانون ختم کراکے یہاں آ جائیں۔
بعد ازاں عدالت نے شہر میں دفعہ 144 کے قانون کے خلاف پی ٹی آئی کی درخواست کے قابل سماعت ہونے پر فیصلہ محفوظ کرلیا۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.