Latest Urdu news from Pakistan - Peshawar, Lahore, Islamabad

بدعنوانی تمام برائیوں کی جڑہے،جس کا خاتمہ نیب کی اولین ترجیح ہے.جسٹس(ر)جاوید اقبال

نیب ملک سے بدعنوانی کے خاتمہ کیلئے اپنی قومی ذمہ داری موئر طریقے سے سر انجام دے رہا ہے نیب کی موثر انسداد بدعنوانی کی حکمت عملی اور شاندار کارکردگی کی بدولت پاکستان کے کرپشن پرسیپشن انڈیکس میں مسلسل کمی آرہی ہے بدعنوان عناصر سے قوم کی لوٹی گئی رقوم کی برآمدگی یقینی بنانے کیلئے اقدامات کئے جانے چاہئیں،چیئر مین نیب

اسلام آباد۔قومی احتساب بیوروکے چیئرمین جسٹس (ر)جاوید اقبال نےکہا ہےکہ بدعنوانی تمام برائیوں کی جڑہےجسکا خاتمہ نیب کی اولین ترجیح ہےنیب ملک سے بدعنوانی کے خاتمہ کیلئے اپنی قومی ذمہ داری موئر طریقے سےسرانجام دے رہاہےنیب راولپنڈی نیب کا اہم علاقائی بیورو ہے جو نیب کی مجموعی کارکردگی میں کلیدی کرداراداکر رہاہے ،نیب کی موثر انسداد بدعنوانی کی حکمت عملی اور شاندار کارکردگی کی بدولت پاکستان کے کرپشن پرسیپشن انڈیکس میں مسلسل کمی آرہی ہے، بدعنوان عناصر سے قوم کی لوٹی گئی رقوم کی برآمدگی یقینی بنانے کیلئے اقدامات کئے جانے چاہئیں۔

وہ منگل کونیب ہیڈ کوارٹرز میں منعقدہ ایک تقریب میں نیب راولپنڈی کی طرف سےمختلف ہائوسنگ سوسائٹیوں کےمتاثرین میں 74کروڑ79لاکھ کے چیک تقسیم کرنے سے مہمان خصوصی کی حیثیت سے خطاب کررہے تھے چیئرمین نیب جسٹس جاوید اقبال نے کہا کہ بدعنوانی تمام برائیوں کی جڑ ہے جو ملک کی ترقی و خوشحالی کی راہ میںبڑی رکاوٹ ہے ۔

انہوں نے کہا کہ نیب احتساب سب کی پالیسی پر عمل کرتے ہوئے بدعنوان عناصر کو پکڑنے کیلئے پر عزم ہے۔نیب ہر قیمت پربدعنوانی کے خاتمہ اور قوم کی امنگوں پر پورا اترنے کیلئے اپنے طریقہ کار میں تبدیلی لایاہے۔ انہوں نے کہا کہ نیب راولپنڈی انسداد بدعنوانی کیلئے آگاہی اور تدارک کے ذریعے زیرو ٹالرینس کی پالیسی پر عمل پیرا ہے۔ انہوں نے کہا کہ نیب کی موثر انسداد بدعنوانی کی حکمت عملی اور شاندار کارکردگی کی بدولت پاکستان کے کرپشن پرسیپشن انڈیکس میں مسلسل کمی آرہی ہے۔

پلڈاٹ،مشعال،گیلانی اینڈ گیلپ سروے،ٹرانسپیرنسی انٹرنیشنل اور عالمی اقتصادی فور م جیسے معتبر عالمی اور قومی اداروں نے نیب کی کوششوں کی تعریف کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ نیب نے گزشتہ ایک سال کے دوران مکمل پیشہ واریت،شفافیت،جذبہ ،عزم اور میرٹ پرکام کیاہے جس کیلئے نیب افسران نے اپنی بہترین صلاحیتوں کا استعمال کیا ہے۔جس کے باعث نیب ایک فعال اینٹی کرپشن کا ادارہ بن چکا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملک کے انسدادبدعنوانی کے اعلی ترین ادارہ ہونے کی حیثیت سے یہ ہماری قومی ذمہ داری ہے کہ مکمل پیشہ واریت،شفافیت،جذبہ ،عزم اور میرٹ پر عمل کرتے ہوئے ملک سے بدعنوانی کے خاتمہ کیلئے اپنی کوششوں کو دوگنا کرنے کے ساتھ ساتھ بدعنوان عناصر سے قوم کی لوٹی گئی رقوم کی برآمدگی یقینی بنانے کیلئے اقدامات کئے جانے چاہئیں۔انہوں نے کہا کہ نیب کے مقدمات میں ٹرائل کورٹ میں مجموعی سزا کی شرح 70فیصد سے زائد ہے۔

2018کے دوران دیگر اینٹی کرپشن اداروں کے مقابلہ میں نیب کی کارکردگی شاندار رہی ہے۔نیب نےاپنےقیام سےلےکر اب تک لوٹے گئے297ارب روپے بدعنوان عناصر سے وصول کر کے قومی خزانہ میں جمع کرائے ہیں جو کہ ریکارڈ کامیابی ہے۔

نیب کے 900ارب روپے مالیت کے1210بدعنوانی کے ریفرنس مختلف معزز احتساب عدالتوں میںزیر سماعت ہیں۔انہوں نے کہا کہ نیب سارک اینٹی کرپشن فورم کا پہلا چئیرمین ہے۔نیب نے چین پاکستان اقتصادی راہداری کے تحت منصوبوں میں بدعنوانی کی روک تھام اور نگرانی میں تعاون کیلئے مفاہمت کی یادداشت پر دستخط کئے ہیں۔

انہوں نےکہا کہ نیب نےراولپنڈی بیورو میں پہلی فرانزک سائنس لیبارٹری قائم کی ہےجس میں ڈیجیٹل فرانزک،سوالیہ دستاویزات اور فنگرپرنٹ کے تجزیہ کی سہولت موجودہے۔نیب نے مقدمات کو موئثر انداز میں نمٹانے کیلئے شکایات کی جانچ پڑتال،انکوائری،انویسٹی گیشن اور احتساب عدالت میں ریفرنس دائر کرنے کیلئے 10ماہ کا عرصہ مقرر کیاہے۔

انہوں نے کہا کہ سینئر سپروائزری افسران کی اجتماعی دانش سے فائدہ اٹھانے کیلئے ڈائریکٹر،ایڈیشنل ڈائریکٹر،انویسٹی گیشن آفیسر اور لیگل کونسل پر مشتمل مشترکہ تحقیقاتی ٹیم کا نظام وضع کیا گیا ہے۔

اس سے نہ صرف نیب کی کارکردگی میں بہتری آئی ہے بلکہ کوئی بھی فرد تحقیقات پر اثر انداز نہیں ہو سکتا۔مشترکہ تحقیقاتی ٹیم کے نتائج حوصلہ افزاء ہیں۔اس موقع پر اظہار خیال کرتے ہوئے قومی احتساب بیورو نیب راولپنڈی کے ڈائریکٹر جنرل عرفان نعیم منگی نے کہا کہ چیئرمین نیب جسٹس جاوید اقبال کی ہدایت پر نیب راولپنڈی میں الگ شکایات سیل قائم کیاگیاہے۔

نیب راولپنڈی نےگذشتہ سال کےدوران1 784 شکایات موصول ہوئی ہیں جن میں سے7000کو قانون کےمطابق نمٹادیا گیاہے۔یہ تعداد گزشتہ پانچ سال کے مقابلہ میں دوگنا ہے۔ انہوں نے کہاکہ نیب راولپنڈی نےگزشتہ سال بدعنوانی کےکل 50 ریفرنسز دائر کئے جبکہ نیب راولپنڈی بدعنوان عناصر سے لوٹے گئے 218 ملین روپے وصول کرکے قومی خزانہ میں جمع کرائے۔

نیب راولپنڈی نے بدعنوانی میں ملوث 50 افراد کو مجموعی طور پر گرفتارکیا۔انہوں نےکہاکہ چیئرمین نیب جسٹس جاوید اقبال کی سربراہی میں گزشتہ ایک سال کےدوران نیب راولپنڈی کی کارکردگی میں نمایاں بہتری آئی ہے۔چیئرمین نیب جسٹس جاوید اقبال نےنیب راولپنڈی کے ڈائریکٹرجنرل عرفان نعیم منگی کی قیادت میں نیب راولپنڈی کی کارکردگی کی تعریف کی اورامید ظاہرکی کہ انکی کارکردگی میں مزید بہتری آئے گی۔

چیئرمین نیب جسٹس جاوید اقبال نے مختلف ہائوسنگ سوسائٹیوں کے متاثرین میں چیک تقسیم کئے۔متاثرین نے ان کی لوٹی گئی رقوم بدعنوان عناصر سے برآمد کرنے کیلئے چیئرمین نیب جسٹس جاوید اقبال کی قیادت میں نیب کی متاثرین کو ان کی لوٹی گئی رقوم کی واپسی کی کوششوں کو سراہا ۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.