Latest Urdu news from Pakistan - Peshawar, Lahore, Islamabad

دوسروں کی امداد اور قرضے مفت نہیں ہوتے، اس کی قیمت چکانا پڑتی ہے۔ وزیراعظم

اسلام آباد: وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ دوسروں کی امداد اور قرضے مفت نہیں ہوتے، اس کی قیمت چکانی پڑتی ہے، لیکن پاکستان بہت بھاری قیمت ادا کرچکا ہے اور اب کرائے کی بندوق کے طور پر استعمال نہیں ہوگا۔ ترک ٹی وی کو دیئے گئے انٹرویو میں امریکا کے ساتھ تعلقات کے حوالے سے بات کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ ‘پاکستان پر ہمیشہ یہ الزام رہا ہے کہ امریکا کے ساتھ تعلقات یک طرفہ رہے، جب آپ دوسروں کی امداد اور قرضوں پر انحصار کرتے ہیں تو یہ مفت نہیں ہوتا، آپ کو اس کی قیمت چکانا پڑتی ہے اور پاکستان نے اس کی بھارتی قیمت چکائی ہے’۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ ‘اب سے پاکستان کسی اور کے لیے نہیں لڑے گا، ہمیں کرائے کی بندوق کے طور پر استعمال نہیں کیا جاسکے گا، ہماری خارجہ پالیسی ایسی ہوگی جو پاکستانی عوام کے مفاد میں ہو’۔ وزیراعظم نے سوال اٹھایا کہ ‘3 سے 4 ہزار حقانی گروپ کے لوگ کیسے وجہ ہوسکتے ہیں، جبکہ ڈیڑھ لاکھ نیٹو افواج اور 2 لاکھ سے زائد افغان فوجی 16 سال میں افغانستان جنگ نہیں جیت سکے’۔

پاک- بھارت تعلقات کے حوالے سے بات کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان اور بھارت ایٹمی ملک ہیں اور اختلافات کو جنگ سےحل کرنا خودکشی ہوگی۔ وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ مسئلہ کشمیر کا حل بھی سفاکیت اور فورسز کا استعمال نہیں بلکہ بات چیت ہے۔

ان کا کہنا تھا، ‘کشمیر بھی ایک بڑا مسئلہ ہے، پچھلے سال کشمیر میں بھارتی سفاکیت اذیت ناک رہی، نوجوانوں کو فائرنگ کرکے شہید کیا گیا،  پیلٹ گنز سےاندھا کیا گیا، اس مسئلے کا حل سفاکیت اور سیکیورٹی فورس کا استعمال نہیں بلکہ بات چیت ہے’۔

پاک-چین دوستی کے حوالے سے بات کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ ‘چینی ہمارے لیے تازہ ہوا کا جھونکا ہیں اور میں یہ ضرور کہوں گا کہ مستقبل میں ہماری معیشت کی بحالی میں چین کا بہت اہم کردار ہوگا’۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.