Latest Urdu news from Pakistan - Peshawar, Lahore, Islamabad

(ق) لیگ اور ایم کیو ایم نے عمران خان مائنس ون فارمولاپیش کردیا

بلوچستان سے 20 اراکین قومی اسمبلی اہمیت اختیار کر گئے

حکومت کی اتحادی جماعت (ق) لیگ اورایم کیوایم نے بحران حل کرنےکے لیے عمران خان مائنس ون فارمولاپیش کردیا۔دونوں جماعتوں نے کہا ہے کہ وزیراعظم خود تو نہیں بچ سکتے، اب وہ پی ٹی آئی کی حکومت بچانے کی کوشش کریں۔

ایم کیو ایم کے کنوینر خالد مقبول صدیقی نے کہا کہ وزیراعظم تو بچتے ہوئے نظر نہیں آرہے لیکن پی ٹی آئی حکومت بچ سکتی ہے لہٰذا حکومت بچانے کے لیے ایسے بہت سے آپشن ہیں جن پر غور ہو سکتا ہے۔ دوسری جانب (ق) لیگ کے رہنما طارق بشیر چیمہ کی جانب سے خالد مقبول صدیقی کی بات کی تائید کی گئی ہے۔

طارق بشیر چیمہ نے کہا کہ وزیراعظم کو چاہیے کہ وہ کوئی نیا ایڈونچر کرنے کے بجائے پی ٹی آئی سے ہی کسی ایسے رکن کو سامنے لائیں جس پر وزارتِ عظمیٰ کے لیے اتفاق کیا جاسکے ، ووٹنگ کے دن تک کی مہلت ہے۔ علاوہ ازیں خالد مقبول صدیقی اور طارق بشیر چیمہ دونوں نے سندھ میں گورنر راج کی بھی مخالفت کردی۔

تحریک عدم اعتماد کے تناظر میں بلوچستان سے تعلق رکھنے والے 20 اراکین قومی اسمبلی کا کردار اہمیت اختیار کر گیا ہے۔ قومی اسمبلی کے 343کے ایوان میں بلوچستان سے تعلق رکھنے والے 20 اراکین یوں تو آٹے میں نمک کے برابر ہیں لیکن صورتحال غیرمعمولی ہو جائے تو یہ اراکین حکومت اور اپوزیشن دونوں کے آنکھ کا تارا بن جاتے ہیں۔

جمعیت علماء اسلام ف اور بلوچستان نیشنل پارٹی کے 10 اراکین پی ڈی ایم اور پی ٹی آئی کے 3 اراکین اپنی جماعت کے ساتھ ہیں تاہم بلوچستان عوامی پارٹی کے 5 اراکین،جے ڈبلیو پی کا ایک اور ایک آزاد رکن قومی اسمبلی کا ووٹ فیصلہ کن ہو گا۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.