Latest Urdu news from Pakistan - Peshawar, Lahore, Islamabad

پاکستان ایران کےساتھ تعلقات کو مزیدمستحکم کرناچاہتا ہے۔اسپیکر قومی اسمبلی

دونوں ممالک کےپارلیمانی نمائندوں کےدرمیان رابطوں سےخطے میں اتحاد اوراستحکام کو فروغ حاصل ہوگا۔اسد قیصر

اسلام آباد۔اسپیکر قومی اسمبلی اسد قیصر نےکہاکہ پاکستان ایران کےساتھ اپنے برادرانہ تعلقات کو بڑی اہمیت دیتا ہےاوراس دیرینہ تعلقات کو مزید مستحکم کرنے کےلیے دونوں ممالک کےارکان پارلیمنٹ کو رابطوں تیزی لانا ہو گی۔

انہوں نےمزیدکہاکہ دونوں اقوام مذہب،تاریخ اورثقافت کےاٹوٹ رشتوں سےبندھی ہوئی ہیں اوران کےدوست،دشمن اورمقاصد بھی سانجھے ہیں۔

ان خیالات کااظہاراُنہوں نےتہران میں منعقدہ دوسری اسپیکرزکانفرنس کےموقع پراپنےایرانی ہم منصب ڈاکٹرعلی لاریجانی سےملاقات میں گفتگو کرتے ہوئے کیا۔

تہران سے موصول ہونے والےپیغام کےمطابق اسپیکراسد قیصرنےکہا کہ پاک۔ ایران تعلقات خطے میں امن،سلامتی اورخوشحالی کےلیے اشد ضروری ہیں۔

دونوں ممالک کےدرمیان پارلیمانی تعلقات کو بڑھانےکی ضرورت پر زوردیتےہوئے اسد قیصر نےکہا کہ دونوں ممالک کے پارلیمانی نمائندوں کے درمیان باقاعدہ اور تسلسل کے ساتھ رابطوں سے خطے میں اتحاد اور استحکام کو فروغ حاصل ہوگا۔

انہوں نےدونوں ممالک کےدرمیان دیگرشعبوں میں تعاون بڑھانےکو وقت کی ضرورت قراردیا۔ اُمت مسلمہ میں اتحاد کی ضرورت پرزور دیتے ہوئےاُنہوں نےاس اُمید کا اظہارکیاکہ مسلم اُمہ کو درپیش مسائل سےنمٹنے کےلیےہمیں اپنی صفوں میں اتحاد پیدا کرنا ہوگااوراسی اتحاد کے ذریعے ہی ہم موجودہ چیلیجزکا سامنا کرسکتے ہیں۔

اسد قیصرنےتوقع ظاہرکی کہ دوسری اسپیکرزکانفرنس کےانعقاد سےناصرف رکن ممالک کےدرمیان رابطےبڑھیں گےبلکہ دہشتگردی کے خاتمےکےلیےمثبت نتائج بھی سامنےآئیں گےجس کی بدولت خطےمیں امن وآشتی قائم ہو گی۔

اسلامی جمہوریہ ایران کےاسپیکر ڈاکٹر علی لاریجانی نےکہاکہ ایران پاکستان کواپنا برادر ملک تصورکرتاہےاورپہلے سے موجود تعلقات کو مزید توانا کرنےکےلیے مختلف شعبوں میں تعاون کرنےکاخواہاں ہے۔

انہوں نےکہاکہ پاکستان اورایران کےدرمیان تعلقات اٹوٹ ہیں دونوں ممالک ہرمشکل گھڑی میں ایک دوسرےکےشانہ بشانہ کھڑےہوتےنظر آئے ہیں۔

ایرانی اسپیکرنےکہاکہ خطےمیں امن قائم کرنےکےلیے پاکستان ایران کا شراکت دار ہےاوروہ اس اُمید کا اظہارکرتےہیں کہ مستقبل میں ترقی کےزینوں پرچڑتےہوئےاپنی اپنی عوام کےلیےخوشحالی لےکرآئیں گے۔

انہوں نےاس موقع پرکاروباری اوردیگر شعبوں میں ایک دوسرےکےساتھ تعاون کرنےکےلیےدونوں ممالک کی پارلیمان کو اپنا کردارادا کرنے کی ضرورت پر بھی زور دیا۔

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.